پاکستان پیپلز پارٹی

    ویکی‌وحدت سے
    پاکستان پیپلز پارٹی
    حزب مردم پاکستان.png
    پارٹی کا نامپاکستان پیپلز پارٹی (PPP)
    قیام کی تاریخ1967
    بانی پارٹیذوالفقار علی بھٹو
    پارٹی رہنمابلاول بھٹو زرداری
    مقاصد و مبانی
    • اسلام ہمارا دین ہے
    • جمہوریت ہماری پالیسی ہے
    • سوشلزم ہمارا معاشی طریقہ ہے
    • ہمارے نقطہ نظر سے طاقت کا سرچشمہ عوام ہیں

    پاکستان پیپلز پارٹی (PPP) کی بنیاد ذوالفقار علی بھٹو نے 1967 میں رکھی تھی۔ یہ سیاسی جماعت پاکستان کی تیسری بڑی جماعت ہے۔ بلاول بھٹو زرداری، اس پارٹی کے موجودہ رہنما، بینظیر بھٹو اور پاکستان کے سابق صدر آصف علی زرداری کے صاحبزادے ہیں [1]۔

    پارٹی کا قیام

    پاکستان پیپلز پارٹی (PPP) 1967م ایوب خان کی قیادت میں قائم ہوئی۔ ایوب خان کے دور میں وزیر خارجہ کے طور پر خدمات انجام دینے والے ذوالفقار علی بھٹو نے سیاسی اختلافات کی وجہ سے استعفیٰ دینے کے بعد 1967 میں پارٹی کی بنیاد رکھی۔

    پارٹی کا نعرہ

    پارٹی کا نعرہ روٹی، کپڑا اور مکان ہے، پارٹی جمہوری سوشلزم کے نظریے کی تقلید کرتی ہے۔ اس پارٹی کی ویب سائٹ کے مطابق ذوالفقار علی بھٹو کا مقصد ایک مساوی معاشرہ تشکیل دینا اور کسانوں اور ان کے مفادات کے تحفظ کے لیے جاگیردارانہ نظام کو ختم کرنا تھا۔
    اس جماعت کے پہلے بیان میں کہا گیا تھا: اسلام ہمارا مذہب ہے، جمہوریت ہماری سیاست ہے، سوشلزم ہماری معیشت ہے اور طاقت کا سرچشمہ عوام ہیں۔ تاہم، اقتدار میں آنے کے بعد، بے نظیر بھٹو نے کاروبار اور نجی سرمایہ کاری کی حوصلہ افزائی کی، جو ان کے والد کی تمام شعبوں کو حکومت کے کنٹرول میں لانے کی قوم پرست پالیسی کے برعکس تھی۔ دسمبر 1970 میں سقوط ڈھاکہ (مشرقی پاکستان) کے بعد یہ پارٹی پہلی بار 1971م اقتدار میں آئی۔

    سیاست اور الیکشن

    پارٹی نے سیاسی معاملات میں دو مسائل کا مطالبہ کیا: 1- اس نے صوبوں کی مکمل خودمختاری کا مطالبہ کیا۔ 2- وہ حکومتی پالیسیوں کے کسی بھی معاملے میں فوجی اور عدالتی مداخلت کے خلاف تھا۔

    انتخابات

    1970 کے انتخابات

    یہ پارٹی شیخ مجیب الرحمن کی عوامی لیگ پارٹی کے مقابلے دوسرے نمبر پر تھی، لیکن دونوں جماعتوں کے درمیان سیاسی اختلافات اور مشرقی پاکستان کی علیحدگی کی وجہ سے پاکستان پیپلز پارٹی نے حکومت بنائی۔ ذوالفقار علی بھٹو، جو سقوط ڈھاکہ کے بعد جنتا کے سربراہ کے طور پر منتخب ہوئے، 1973 میں ملک کے وزیراعظم بنے۔

    1977 کے انتخابات

    پارٹی نے دوبارہ الیکشن جیت لیا لیکن اپوزیشن نے الیکشن میں دھاندلی کا الزام لگایا اور حلف اٹھانے سے انکار کر دیا۔ اس سیاسی تنازعہ نے ضیاء الحق کی فوجی حکمرانی کی راہ ہموار کی۔

    1988 کے انتخابات

    پارٹی دوبارہ اقتدار میں آئی اور بے نظیر بھٹو اس ملک کی وزیر اعظم منتخب ہوئیں۔

    1990 کے انتخابات

    اس وقت کے صدر غلام اسحاق خان نے بے نظیر بھٹو کی حکومت کو کرپشن کے الزام میں برطرف کر دیا تھا۔

    1993 کے انتخابات

    پارٹی نے پھر حکومت بنائی جس میں بے نظیر بھٹو وزیر اعظم منتخب ہوئیں۔ 1996 میں ان کی حکومت کا دوبارہ تختہ الٹ دیا گیا جس کے بعد وہ انگلینڈ چلے گئے۔

    2008 کے انتخابات

    آصف علی زرداری

    بینظیر بھٹو کی شہادت کے چند ماہ بعد عام انتخابات ہوئے۔ بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ بے نظیر بھٹو کے قتل سے پیدا ہونے والی ہمدردی نے پاکستان پیپلز پارٹی کو اقتدار میں لانے میں بڑا کردار ادا کیا۔ یوسف رضا گیلانی وزیراعظم اور آصف علی زرداری صدر منتخب ہوئے۔

    2013 کے انتخابات

    پارٹی پارلیمنٹ میں سب سے بڑی اپوزیشن بن کر ابھری اور سندھ حکومت بھی بنائی۔

    پاکستان میں پارٹی کی کامیابیاں

    پاکستان پیپلز پارٹی کی حکومت کے پہلے دور میں 1973 میں ’’آئین پاکستان‘‘ منظور ہوا۔
    پاکستان کا ایٹمی پروگرام ذوالفقار علی بھٹو کی پہلی حکومت کے ساتھ شروع کیا گیا تھا جس کا نعرہ تھا کہ ’’اگر پاکستانی عوام گھاس کھانے پر مجبور ہوئے تو ہم ایٹم بم بنائیں گے‘‘۔
    فرقہ واریت کو کم کرنے اور جاگیردارانہ نظام کے خاتمے کے اپنے وعدے کو پورا کرنے کے لیے، پارٹی نے غریب کسانوں میں زمینیں تقسیم کیں اور پاکستانی سٹیل ملیں لگائیں۔ مسلم دنیا کی پہلی خاتون وزیر اعظم بے نظیر بھٹو نے 1988 سے 1990 اور 1993 سے 1996 تک اپنے مختصر دور حکومت میں خواتین کے پولیس سٹیشن قائم کیے اور خواتین کو کاروبار کے لیے قرضے دیے۔ ویانا ڈیکلریشن آف ہیومن رائٹس کو 1993 میں تسلیم کیا گیا۔ وہ سپریم کورٹ میں ایک حق پرست اور خاتون جج کے طور پر تعینات ہوئیں۔
    2006 میں پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار رتنا بھگوان داس چاولہ نامی ہندو خاتون پاکستان پیپلز پارٹی کے ٹکٹ پر سینیٹر منتخب ہوئیں۔ انہوں نے آئین کی 18ویں ترمیم کی منظوری دی جس سے صوبوں کو اختیارات مل گئے۔ صوبہ سرحد کا نام بدل کر خیبر پختونخواہ رکھ دیا گیا۔ ملکی تاریخ میں پہلی بار فہیمدہ مرزا نامی خاتون کو قومی اسمبلی کی سپیکر مقرر کر دیا گیا۔ 2018 میں سینیٹ انتخابات کے بعد شیری رحمان پارلیمنٹ میں پہلی اپوزیشن لیڈر بنیں۔

    پارٹی کو چیلنجز اور سیاسی نقصان

    ذوالفقار علی بھٹو کو 1978 میں ان کے ایک ساتھی کے قتل کے جرم میں پھانسی دی گئی تھی لیکن ان کا مقدمہ ابھی تک متنازعہ ہے۔ بے نظیر بھٹو کی دونوں حکومتوں کے دوران، ان پر اور ان کے شوہر آصف علی زرداری پر کرپشن کے الزامات لگے، پہلے غلام اسحاق خان نے 1990 میں، اور پھر فاروق لیگر نے 1996 میں۔ جس دن بے نظیر بھٹو تقریباً دس سال کی جلاوطنی کے بعد پاکستان واپس آئیں۔
    انگلستان سے 2007 میں کراچی کی کرزاز روڈ پر دو دھماکے ہوئے جن میں کم از کم 150 افراد ہلاک ہوئے۔ اگرچہ بے نظیر بھٹو کار بم دھماکے میں زخمی نہیں ہوئیں لیکن تقریباً دو ماہ بعد راولپنڈی کے لیاقت باغ میں ایک جلسے کے دوران وہ ہلاک ہو گئیں اور اس کے بعد پارٹی کی قیادت ان کے بیٹے بلاول بھٹو زرداری کو سونپی گئی۔ 2008 میں اقتدار میں آنے کے بعد پاکستان پیپلز پارٹی اپنی مدت پوری کرنے میں کامیاب رہی لیکن اس کے دور میں کئی تنازعات بھی سامنے آئے۔ سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی توہین عدالت کے باعث وزارت عظمیٰ سے مستعفی ہونے پر مجبور ہو گئے تھے۔

    امریکہ کے ساتھ تعلقات کی تاریکی

    پاکستان کے شمالی اور قبائلی علاقوں میں ڈرون حملوں میں اضافے سے امریکہ کے ساتھ تعلقات مزید کشیدہ ہو گئے ہیں۔ امریکہ کے ساتھ دو طرفہ تعلقات 2011 میں جب سابق سی آئی اے ایجنٹ ریمنڈ ڈیوس نے لاہور میں دو موٹر سائیکل سواروں کو گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔ ریمنڈ ڈیوس نے اس وقت پاکستان چھوڑا جب دونوں نوجوانوں کے اہل خانہ نے تاوان قبول کرنے کا اعلان کیا۔ پاکستان اور امریکہ کے تعلقات کو اس وقت شدید دھچکا لگا جب بحری افواج نے ایبٹ آباد پر حملہ کر کے القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کو ہلاک کر دیا۔ پاکستانی حکومت نے دعویٰ کیا کہ اسے اس حملے کا علم نہیں تھا لیکن امریکی حکومت نے دوسری بات کہی۔ اسی سال پاکستان نے افغانستان کے لیے نیٹو کی سپلائی لائن بند کر دی جب نیٹو ہیلی کاپٹروں نے سلالہ چوکی پر حملہ کر کے 28 سکیورٹی اہلکاروں کو ہلاک کر دیا۔ پیپلز پارٹی کی حکومت میں اقلیتوں کا ٹارگٹ کلنگ، بھتہ خوری اور اسٹریٹ کرائمز میں بھی اضافہ ہوا۔ ذوالفقار علی بھٹو کی حکومت کے علاوہ وزیراعظم کی تمام حکومتوں میں کرپشن کے کئی سکینڈل سامنے آئے ہیں۔ پرویز مشرف کے فوجی دور میں پارٹی ناراض ہو گئی تھی اور اس کے لیڈر کے خلاف مالی الزامات کے تحت مقدمہ چلایا گیا تھا [2]

    پاکستان کے وزیر خارجہ کی حیثیت سے پارٹی کے سربراہ بلاول بھٹو زرداری

    بلاول بھٹو زرداری 2022 میں مسلم لیگ نواز پارٹی کے سربراہ شہباز شریف کی حکومت میں 37ویں وزیر خارجہ منتخب ہوئے۔

    ایران کے ساتھ تعلقات کو وسعت دینا

    بلاول بھٹو زرداری

    ایران کے وزیر خارجہ امیر عبداللہیان نے وزارت خارجہ کے لیے منتخب ہونے کے بعد بلاول بھٹو زرداری کے ساتھ فون پر گفتگو کرتے ہوئے کہا: مجھے امید ہے کہ پاکستان کے سفارتی نظام میں آپ کی انتظامیہ کے دوران ہم دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں وسعت کا مشاہدہ کریں گے۔ اسلامی جمہوریہ ایران اور پاکستان اس سال اپنے تعلقات کی 75 ویں سالگرہ منا رہے ہیں اور یہ تعلقات جو کہ وسیع ثقافتی، تاریخی اور لسانی مشترکات پر مبنی ہیں، مسلم ممالک کے درمیان تعلقات کے لیے ایک نمونہ کے طور پر کام کر سکتے ہیں۔ ایجنڈے پر تعاون کے لیے اور ہم تمام جہتوں میں تعلقات کو بہتر بنانے کے لیے پرزور کوشش کرتے ہیں، ہمارا کام نئی باہمی تعاون اور سہولیات پیدا کرنا ہے جس کی دونوں ممالک کے رہنماؤں اور عوام سے توقع ہے۔ ایران کے وزیر خارجہ کے فون کال کے جواب میں انہوں نے کہا: پاکستان کے دوست ملک ایران اور عوام کے ساتھ اچھے تعلقات، دونوں ممالک کے درمیان تاریخی اور ثقافتی مشترکات اور موجودہ دور میں دوطرفہ تعلقات کو ہر ممکن حد تک وسعت دینے کا اسلام آباد کا عزم۔ دونوں ممالک کے معاشی تعلقات میں رکاوٹیں بڑھنے سے زیادہ ہیں [3]۔

    حوالہ جات